Woh jis ka saaya ghana ghana hai

Woh jis ka saaya ghana ghana hai

وہ جس کا سایہ گھنا گھنا ہے

Bahut kadi dhoop jhelta hai

بہت کڑی دھوپ جھیلتا ہے

Abhi to mere hi lab hile they

ابھی تو میرے ہی لب ہِلے تھے

Magar yeh kis shakhs ki sadaa hai

مگر یہ کس شخص کی صدا ہے

Agar mein chup hoon to sochta hoon

اگر میں چپ ہوں تو سوچتا ہوں

Koi to pooche ki baat kya hai

کوئی تو پوچھے کہ بات کیا ہے

Mere labon par Yeh muskurahat

مِرے لبوں پر یہ مسکراہٹ

Magar jo seene mein Dard basaa hai

مگر جو سینے میں درد بسا ہے

Koi shikayat nahi kisi se

کوئی شکایت نہیں کسی سے

Ki shauk apna bhi naarsa hai

کہ شوق اپنا بھی نارسا ہے

Is jagah kyun bhatak raha hoon

اسی جگہ کیوں بھٹک رہا ہوں

Agar yahi ghar ka raasta hai

اگر یہی گھر کا راستہ ہے

– Ibne Safi (Israr Naarvi)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.